تازہ ترین

Post Top Ad

Friday, February 14, 2020

الڑاساونڈ سنٹر میں کی گئی جانچ کی نشاندہی پر آپریٹر سخت کارروائی ہوگی: ڈسٹرکٹ مجسٹریٹ

رپورٹ۔حافظ محمد شاہد بجنور ۔(یو این اے نیوز 14 فروری 2020) ڈسٹرکٹ مجسٹریٹ رماکانت پانڈے نے واضح طور پر کہا ہے کہ ضلع اور اس طرح کے کسی بھی الٹرا ساو ¿نڈ سنٹر میں کسی بھی بچی کی نشاندہی کے کام کی اجازت نہیں ہوگی جس پر معائنہ کے بعد ایسی کوئی شکایت موصول ہوئی ہو اور وہ جانچ میں سچ ثابت ہوتی ہے تو سینٹر کو بند کراکر اس کے آپریٹر کے خلاف سخت قانونی کارروائی عمل میں لائی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ لڑکی جنین کا قتل نہ صرف گھناو ¿نا جرم ہے ، بلکہ انسانیت اور فطرت کی طرف ایک بہت ہی قابل مذمت کام ہے۔

 اس سے ایک طرف قدرتی جنسی تناسب میں عدم توازن پیدا ہوتا ہے ، اور دوسری طرف انسانی اقدار بھی زوال پذیر ہوتی ہیں۔ انہوں نے نوڈل آفیسر پی سی پی این ڈی ٹی کو ہدایت کی کہ وہ ہفتے میں کم از کم تین الٹراساو ¿نڈ مراکز کا معائنہ کریں اور نئے الٹراساو ¿نڈ مراکز اور جدت طرازی کی اجازت صرف اس صورت میں دیں جب متعلقہ الٹرا ساو ¿نڈ مراکز میں تمام باقاعدگی مکمل ہوجائے۔

 ضلع مجسٹریٹ جناب پانڈے آج شام 4 بجے پی سی پی این ڈی ٹی سے متعلق کمیٹی کے اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کلکٹریٹ کے دفتر میں تقریر کررہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے ملک اور ضلع میں جنسی تناسب میں شدید کمی ایک سنگین اور پریشان کن مسئلہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس مسئلے کا حل صرف ملاقاتوں کے ذریعے ہی ممکن نہیں ہے ، لیکن عام لوگوں کو جنسی تناسب کے بحران سے آگاہ کرنا اس وقت کی سب سے بڑی ضرورت ہے۔ انہوں نے ہدایت کی کہ وہ ضلع میں الٹراساو ¿نڈ مراکز کی اجازت دیں اور تجدید کے معاملات میں مکمل تحقیقات کے بعد ہی ہر سنٹر اور الٹراساو ¿نڈ روم میں خواتین کے جنین قتل سے متعلق قانونی معلومات کی بنیاد پر بورڈ یا دیوار پر آئی سی میٹریل لکھیں۔ اس کے بعد ہی سی سی ٹی وی کیمروں کی تنصیب لازمی کی جائے ،

مائعات وغیرہ کی تجدید کے لئے اجازت دی جانی چاہئے۔ انہوں نے سخت ہدایات دیں کہ کسی بھی سینٹر اور آپریٹر کے خلاف سخت قانونی کارروائی کی جانی چاہئے جو لڑکی جنین کی نشاندہی کرے ۔چاہے وہ شخص کتنا ہی بااثر یا طاقتور کیوں نہ ہو ، تب ہی اس قانون کا جواز ثابت ہوسکتا ہے۔

 میٹنگ کے دوران ، ضلع مجسٹریٹ کو متفقہ طور پر تین نئی رجسٹریشنوں ، دو نئی الٹراساو ¿نڈ مشینوں کی خریداری کی اجازت دیتے ہوئے ، تین تجدید معاملات ، اور یہ یقینی بنانا ہوگا کہ حکومت نے تمام مراکز میں جاری کردہ قواعد پر عمل کیا جائے۔ اس موقع پر نوڈل آفیسر پی سی پی این ڈی ٹی ، ڈاکٹر ایس کے کے نگم ، ڈاکٹر آبھا ورما چیف میڈیکل اسسٹنٹ ، ممبر ڈی جی سی مکیش تیاگی ڈاکٹر بی آر سین اور کمیٹی کے دیگر ممبران موجود

No comments:

Post a Comment

Post Top Ad