تازہ ترین

Post Top Ad

منگل، 26 مئی، 2020

اقوام متحدہ میں سعودی عرب نے مسلمانوں کے خلاف نفرت انگیز تقاریر اور امتیازی سلوک کو روکنے کے لیے اٹھائی آواز۔

سعودی(یواین اے نیوز25مئی2020)اس تشویش کا اظہار اقوام متحدہ میں اقوام متحدہ کے سفیر عبد اللہ بن یحییٰ المالمی کے ذریعے نیویارک میں اسلامی تعاون تنظیم (او آئی سی) کے سفیروں کے مجازی اجلاس کے دوران کیا گیا۔آپ کو بتادیں کہ سعودی عرب نے دنیا کے کچھ حصوں میں بڑھتے ہوئے اسلامو فوبیا اور مسلمانوں کے خلاف نفرت انگیز تقریر کرنے پر تشویش کا اظہار کیا ہے۔

اس تشویش کا اظہار اقوام متحدہ میں مملکت کے مستقل نمائندے عبد اللہ بن یحییٰ المالمی نے نیویارک میں تنظیم اسلامی تعاون تنظیم (او آئی سی) کے سفیروں کے مجازی اجلاس کے دوران کیا ہے جس کی سربراہی میں اقوام متحدہ کی سفیر لانا ذکی نصیبی نے کی۔سعودی خبر رساں ادارے ایس پی اے کی خبر کے مطابق ، سعودی سفارتکار نے مسلمانوں کے خلاف "امتیازی سلوک اور نسل پرستی کے طریقوں" کا مقابلہ کرنے کی ضرورت پر زور دیا اور ان پر ظلم و ستم کو روکنے پر زور دیا۔

انہوں نے گذشتہ سال مقدس شہر مکۃ المکرمہ میں منعقدہ اسلامی سربراہی اجلاس کے اختتام پر جاری کردہ مکہ اعلامیہ کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ اس سے بات چیت کی ثقافت کو فروغ ملتا ہے اور یہ اسلام کی رواداری کو ثابت کرتا ہے۔المالمی نے کہا ، "سلطنت او آئی سی کے اندر اسلامی ممالک کے موقف کی حمایت کرتی ہے تاکہ وہ کچھ ممالک میں مسلمانوں کے خلاف ہونے والے امتیازی سلوک اور نسل پرستی کو مسترد کرے۔

اسی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے اقوام متحدہ میں پاکستان کے مستقل نمائندے منیر اکرم بھی موجود تھے ، جنہوں نے اسلامو فوبیا میں اضافے اور متعدد یورپی ممالک اور بھارت میں مسلمانوں کے خلاف نفرت انگیز تقاریر سے متعلق کانفرنسوں کو آگاہ کیا۔انہوں نے یورپ میں کچھ دائیں بازو کی جماعتوں کے ذریعہ پائے جانے والے امتیازی سلوک کے واقعات کا حوالہ دیا جو عالمی تجاوزات وبائی امراض کے دوران مسلمان تارکین وطن کو ملک بدر کرنے پر زور دیتے ہیں۔

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

Post Top Ad