تازہ ترین

Post Top Ad

پیر، 18 مئی، 2020

دہلی کے ایک گاؤں میں دبنگوں نے مبینہ طور پر 12 مسلمان خاندانوں کو مذہب تبدیل کرنے پر کیا مجبور!

نئی دہلی،روپورٹ،مسیح الزماں انصاری (یواین اے نیوز18مئی2020)ہریانہ کے سونی پت ضلع سے متصل دہلی کے بوانا کے علاقہ ہریالی گاؤں میں 12 مسلم کنبوں کو زبردستی مذہب تبدیل کرنے کا معاملہ سامنے آیا ہے۔ یہ الزام لگایا گیا ہے کہ 5 مئی کو بوانا کے علاقے میں ہرولی گاؤں کے 12 مسلم کنبوں کے 60 کے قریب افراد کو گاؤں کے کچھ جاٹ دبنگوں نے ہندو مذہب قبول کرنے پر مجبور کیا۔گاؤں کا ایک مسلم دلشاد تبلیغی جماعت کے پروگرام میں شرکت کے لئے بھوپال گیا تھا۔وہاں سے واپس آنے کے بعد گاؤں کے ہندو جاٹ برادری کے نوجوانوں نے دلشاد کو بے رحمی کے ساتھ پیٹا اس پر الزام لگایا کہ وہ کورونہ پھیلا رہا ہے اور اس پر دباؤ ڈالا کہ وہ واپس تبلیغی جماعت میں نہ جائے۔

انڈیا ٹومارو سے بات کرتے ہوئے دلشاد نے کہا جب گاؤں کے جاٹ مجھے مار رہے تھے وہ مجھ سے اسلام مذہب چھوڑنے کے لئے کہہ رہے تھے۔ وہ مجھے جان سے مارنے کی دھمکی بھی دے رہے تھے کہ اگر میں گاؤں میں رہنا چاہتا ہوں تو ہندو مذہب کو اپنانا پڑے گا۔اس واقعے کے بعد ملزم 5 مئی کو گاؤں کے 12 مسلم کنبوں کو زبردستی مندر میں لے گیا اور انہیں ہندو مت اپنانے پر مجبور کیا۔مصیبت زدہ گلاب کہتے ہیں ہمیں مندر میں لے کرجایا گیا اور  گنگا کا پانی چھڑکا گیا اور کہا گیا کہ اب آپ ہندو ہوگئے ہیں اور ہندو ہی بن کر رہیں گے۔

ہریالی گاؤں کے کچھ لوگوں نے مقامی میڈیا کو بتایا کہ دبنگوں نے واٹس ایپ پر اس کی منصوبہ بندی کی اور اس گاؤں کے لوگوں سے بھی مندر میں جمع ہونے کی اپیل کی ،جس کے بعد ایک بہت بڑا ہجوم مندر کے باہر جمع ہوگیا۔فرقہ پرستوں نے ایک بار پھر مسلمان خاندانوں کے لوگوں کو مندر میں بلایا اور انہیں مذہب تبدیل کرنے پر مجبور کیا۔متاثرہ دلشاد کا ہمسایہ بلبیر جن پر ہندو مذہب اختیار کرنے پر مجبور کیا گیاہے نے بتایا کہ فرقہ پرستوں نے مندر میں لے جاکر گائے کا پیشاب زبردستی پلایا اور کہا کہ آج کے بعد سے کوئی بھی مسجدنہیں جائے گا اور مرنے والوں کو قبرستان میں دفن نہیں کریئے گا۔سب مرنے والوں کو ہندوؤں کی طرح شمشان لے جاکر جلانا چاہیے۔

دلشاد کو زدوکوب کرنے کی ایک ویڈیو بھی بنائی گئی تھی اور بعد میں یہ سوشل میڈیا پر وائرل ہوگئی۔ ملزم نوجوان اب دلشاد پر دباؤ ڈال رہا ہے کہ وہ پولیس میں اسکی شکایت نہ کرے۔نریلا کے ایک سماجی کارکن محمد اکرم جو اس معاملے کو قریب سے دیکھ رہے ہیں مقامی میڈیا سے کہتے ہیں ، “اس گاؤں میں 12 مسلمان خاندان ہیں جو تعلیم یافتہ نہیں ہیں۔ گاؤں میں کوئی مسجد بھی نہیں ہے،لہذا لوگوں کی اسلامی تربیت نہیں ہوسکی ہے۔ آزادی کے بعد یہاں پر جومسلمان رہ گئے وہ  اپنا نام ہندو جیسا ہی رکھنے لگے۔

اکرم کہتے ہیں ، "اگرچہ وہ سب مسلمان ہیں ، ان کے نام ہندو ناموں جیسے ہیں۔" اب جب نئی نسل اسلام کو سمجھ رہی ہے اور اس نے مسلمانوں کی طرح اپنے نام رکھنا شروع کردئیے ہیں ، اس گاؤں کے دبنگ جاٹوں میں یہ بات ناگوار گزر رہی ہے۔ یہی وجہ ہے کہ وہ تبلیغی جماعت کے بہانے گاؤں کے 12 مسلم خاندانوں کو زبردستی مذہب تبدیل کروارہے ہیں۔پچھلے کچھ مہینوں میں ہریانہ کے بہت سے دیہات میں مسلمانوں کو ہندو مذہب قبول کرنے پر مجبور کرنے کا معاملہ سامنے آیا ہے۔

ایک دیہاتی نے بتایا کہ اس نے ہندو جاٹوں کے ظلم و ستم کے خوف سے "سدھی کرن" کی مخالفت نہیں کی۔ انہوں نے کہا "سینکڑوں لوگ مندر میں جمع ہوئے اور 12 مسلم کنبوں میں سے ہر ایک کے بڑے ارکان کو بلایا گیا اور پھر انہیں مندر میں چلنے پر مجبور کیا گیا۔ ہم ان کے خوف سے مندر میں گئے تھے لیکن اپنا مذہب نہیں چھوڑیں گے۔ ہم مسلمان تھے اور مسلمان رہیں گے۔سماجی کارکن محمد اکرم نے بتایا ، "اس گاؤں کے تمام مسلمان خاندان رمضان میں روزے رکھے ہوئے ہیں۔ وہ جس قدر اسلام جانتے ہیں اتنا ہی عمل کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ اس وقت انہیں دبنگ سے بچانا بھی ان کی ترجیح ہے۔ لاک ڈاؤن ختم ہونے کے بعد ہم اس سلسلے میں شکایت کریں گے۔

میڈیا کی پروپیگنڈا اور دائیں بازو کی قوتوں کے ذریعہ پھیلائی جانے والی نفرتوں کا اثر دور دراز کے دیہات تک بھی پہنچا ہے۔کرونا کے پھیلنے کی وجہ سے تبلیغی جماعت کو کٹہرے میں ڈال دیا گیا تھا اور میڈیا کے زہر آلود ہونے کے اعلان کے بعد ملک کے مختلف حصوں سے مسلمانوں پر حملوں کی اطلاعات موصول ہوئی ہیں۔بہت سے شہروں میں مسلمان سبزیوں مسلم پھلوں کو فروخت کرنے والوں اور مسلم شناخت رکھنے والوں کے ساتھ غیر انسانی سلوک کیا گیا تھا اور ان کا مالی بائیکاٹ بھی کیا گیا ہے۔تاہم جبری طور پر تبادلوں سے معاشی بائیکاٹ کا معاملہ منظرعام پر آگیا ہے جو ملک کے قانون کے نظام پر ایک بڑا سوال اٹھ رہا ہے۔

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

Post Top Ad