تازہ ترین

Post Top Ad

بدھ، 13 مئی، 2020

صحافی نے ڈاکٹر کفیل پر راسوکا کو 3 ماہ کی توسیع پر اٹھائے سوال،کہا اگر وہ باہر ہوتے تو۔۔

لکھنؤ (یواین اے نیوز13مئی2020)اتر پردیش کے گورکھپور کے ڈاکٹر کفیل خان کی مشکلات بڑھتی ہوئی نظر آ رہی ہیں،دراصل 3 ماہ پیچھے ڈاکٹر کفیل خان کو ترمیم شدہ شہریت کے قانون کی مخالفت کرنے پر گرفتار کیا گیا تھا۔ اب یہ خبریں آرہی ہیں کہ وزارت داخلہ نے ان پر عائد راسوکا میں 3 ماہ کی اور توسیع کردی ہے۔اس تناظر میں علی گڑھ کے ڈی ایم ، چندر بھوشن سنگھ نے معلومات دیتے ہوئے کہا ہے کہ ڈاکٹر کفیل خان پر لگائے گئے راسوکا میں 3 ماہ کا اضافہ کردیا دیا گیا ہے۔ وزارت داخلہ نے اس سلسلے میں ایک ریڈیوگرام بھیجا ہے۔ 13 اگست تک ڈاکٹر کفیل خان کو راسوکا میں حراست میں رکھا جائے گا۔

معلومات کے لیے ، ہم آپ کو بتادیں کہ اس سال جنوری میں ، ڈاکٹر کفیل خان نے اے ایم یو میں اسپیکر کی حیثیت سے شہریت  ترمیمی قانون (سی اے اے) اور قومی شہریت رجسٹر (این آر سی) کے خلاف احتجاج کیا تھا۔ اس دوران انہوں نے وزیر داخلہ امیت شاہ کے خلاف ایک تبصرہ کیا تھا۔اہم بات یہ ہے کہ ڈاکٹر کفیل کو گذشتہ سال 29 جنوری کو علی گڑھ مسلم یونیورسٹی میں شہریت والے ترمیم کے قانون کے خلاف اشتعال انگیز تقریر کرنے پر 10 دسمبر کو گرفتار کیا گیا تھا۔ ڈاکٹر کفیل کو 10 فروری کو الہ آباد ہائی کورٹ نے ضمانت دے دی تھی ، لیکن جیل انتظامیہ نے اس حکم کے تین دن بعد بھی رہا نہیں کیا تھا۔ ڈاکٹر کفیل خان پر راسوکا 13 فروری کو لگایا گیا تھا۔ اب وہ متھرا کی جیل میں بند ہیں۔

حکومت کے فیصلے پر اعتراض کا اظہار کرتے ہوئے صحافی ہمانشو کمار نے فیس بک کے توسط سے کہا کہ "ڈاکٹر کفیل خان کو جیل گئے ہوئے 102 دن ہوگئے ہیں۔" ان پر 13 فروری کو این ایس اے نافذ کیا گیا تھا۔ جسے آج پھر تین ماہ کے لئے بڑھایا گیا ہے۔ " لوگوں کا کہنا ہے کہ کرونا بحران کے وقت اگر ڈاکٹر کفیل جیل سے باہر ہوتے تو وہ ملک کے لئے مفید ہوتا۔ 500 کی گنجائش والی متھورا جیل میں 1750 قیدی ہیں۔ جس میں ایک ڈاکٹر کفیل ہیں۔

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

Post Top Ad