تازہ ترین

Post Top Ad

ہفتہ، 9 مئی، 2020

مسلمانوں کے خلاف نفرت پھیلانے والے نیوز چینل اب خلیجی ممالک سخت۔ان چینلوں پر لگے گی پابندی اور۔۔۔۔

نئی دہلی(یواین اے نیوز9مئی2020)ہندوستان میں فرقہ واریت کی آگ جو تیزی سے بڑھ چکی ہے اب وہ ہندوستان کی حدود کو عبور کر کے دنیا بھر کے ممالک تک پہنچ چکی ہے جس پر بہت سارے ممالک اب ایسے سخت فیصلے لینے کے منتظر ہیں جو کافی تشویشناک ہیں۔ کچھ میڈیا چینلز کو بتا رہے ہیں۔اور ان میڈیا چینلز نے اپنے ملک میں ان کے دکھائے جانے پر پابندی کا مطالبہ کرنا شروع کردیا ہے۔ میڈیا چینلز کے نام بھی بتا دیا ہے جو نفرت پیدا کرنے اور ایک مخصوص کمیونٹی کو نشانے پر رکھنے کے لئے فرضی خبروں کو دھڑلے سے چلا رہے ہیں۔

گلف نیوز متحدہ عرب امارات کے فیڈرل پبلک پراسیکیوشن نے حال ہی میں ایک انتباہ جاری کیا ہے کہ جب ایسے مجرمان سوشل میڈیا پر ایسی حرکتیں کرتے ہیں تو انہیں سخت سزا اور قید کا سامنا کرنا پڑے گا۔ریاست کے قانون کے مطابق جو بھی کسی بھی طرح کی امتیازی سلوک کرتا ہے اسے پانچ سال قید کی سزا ہوسکتی ہے اور لاکھوں کا جرمانہ بھی ہوسکتا ہے۔ آپ کو یاد دلائیں کہ پچھلے کئی دنوں سے نہ صرف ہندوستان اور مسلمان ہی ، بلکہ عرب ممالک میں ملازمت پانے والے ہندوستانی نسل کے غیر مسلم افراد بھی نسل پرستانہ اور اسلام ، پیغمبر اور اسلام مخالف پوسٹ کر رہے تھے۔ جس کی وجہ سے بہت سے لوگوں نے ملازمت سے ہاتھ دھو بیٹھے ہیں ، بہت سوں کو اس کے لئے جیل بھیجا گیا ہے۔ کہا گیا ہے کہ ہمارےیہاں ہر ذات ہے مذہب اور کمیونٹی کے لوگ سکون سے ایک ساتھ رہتے ہیں ہم اپنے ملک میں ایسے لوگوں کو اور اس طرح کی خبر چلا کر لوگوں کے ذہنوں میں ایسی امتیازی سلوک اور نفرت پیدا کرنے والے ذرائع کو نہیں چلنے دے سکتے۔

متحدہ عرب امارات اور خلیجی ممالک کے متعدد سربراہان اور ذمہ دار عربوں نے اسلام اور مسلمانوں کے خلاف پیدا ہونے والی نفرت پر تشویش کا اظہار کیا ہے۔اس معاملے میں ، متحدہ عرب امارات ، قطر اور عمان نے سوشل میڈیا کے ذریعہ ہندوستانی سفارت خانوں کا رخ کیا۔ وہاں سے اس نفرت پھیلانے کے بارے میں ایک انتباہ بھی دیا گیا ہے ۔مزید کہا گیا کہ سوشل میڈیا پر اس طرح کی مکروہ پوسٹ کے پیچھے کیا وجہ ہے؟ بھارتی میڈیا پر براہ راست مجرم ہونے کا الزام عائد کیا گیا ہے۔کچھ میڈیا چینلز نے جعلی خبریں چلائیں اور خاص طور پر ہندوستان میں جب تک کہ جھوٹ کو سچ تسلیم نہیں کیا جاتا مسلمانوں کے لئے نفرت پیدا کرنے سے نفرت کرتے ہیں۔بتایا گیا ہے کہ کرونا وائرس کی آمد کے بعد ،ہندوستانی میڈیا کے کچھ چینلز نے ایک خبر چلائی کہ مسلمان پھل تھوک کر کورونہ پھیلا رہا ہے اور یہ خبر بار بار چلائی جاتی ہے۔ لوگ زبردستی اس پر یقین کرتے ہیں ۔اس کا اثر یہ ہے کہ سبزیوں ، پھلوں اور دیگر چیزوں کا کاروبار کرنے والے مسلمانوں کے بائیکاٹ کی اطلاعات ہیں۔ریپبلک ٹی وی ، زی نیوز ، انڈیا ٹی وی ، آج تک ، اے بی پی نیوز اور ٹائمز ناؤ سمیت۔ عرب ممالک کے سب سے بڑے اخبار گلف نیوز نے ان چینلز کو عرب دی نیوز میں نشر کیااور انکے نشریات کو بند کرنے کا مطالبہ کیا۔

1 تبصرہ:

  1. ये नफरतें ले डूबे गी भारत को
    आलम यह है कि मुसलमान को उकसाया जा रहा है
    ताकि उनका नरसंहार किया जाए
    अब तो अल्लाह हीं बचाए गा

    جواب دیںحذف کریں

Post Top Ad