تازہ ترین

Post Top Ad

ہفتہ، 23 مئی، 2020

زی نیوز کے ملازم نے اسپتال میں کی ڈاکٹروں کے ساتھ مارپیٹ۔سوشل میڈیا پر وائرل۔

نئی دہلی(یواین اے نیوز23مئی2020)آج کل ٹویٹر ایک ویڈیو بہت تیزی سے وائرل کی جارہی ہے جس میں یہ دکھایا گیا ہے کہ ایک شخص ایک ڈاکٹر کو مار رہاہے۔ اسی ویڈیو کو ٹیوٹر پر نیہا نے ایک سی سی ٹی وی فوٹیج شیئر کی ہے جس میں دکھایا گیا ہے کہ ایک شخص اسپتال کے اندر ایک ملازم کے ساتھ مار پیٹ کررہا ہے۔ انہوں نے لکھا ،"زی نیوز کے عملے نے کورونا وائرس کے جانچ سے انکار کرنے کے بعد ڈاکٹر کو پیٹا۔ نیوز چینلز کی طرح کیا ہم بھی اس کی حقیقت کو جانے بغیر ہزاروں بار اس کا شئیر کرسکتے ہیں۔

اس ویڈیو کو زی نیوز کے 28 ملازمین کے کورونا وائرس میں مثبت پایا جانے کے بعد شیئر کیا جارہا ہے۔نیہا نے پہلے یہ ویڈیو شیئر کی ، بعد میں اور بھی بہت سے لوگوں نے اسے آگے شئیر کیا۔ مہ نور نوری نامی صارف نے دعوی کیا ہے کہ زی نیوز کے رپورٹر نے جانچ کرنے سے انکار کردیا اور ڈاکٹر کے ساتھ لڑائی کی،  اسی عنوان کے ساتھ فیس بک پر بھی ویڈیو شیئر کی گئی ہے۔

آپ کو بتادیں کہ اس ویڈیو کو چین گلوبل ٹیلی ویژن نیٹ ورک (سی جی ٹی این) نے 14 اکتوبر 2018 کو شیئر کیا تھا۔ یہ واقعہ 22 ستمبر 2018 کو پیش آیا ، جہاں پوکنگ یونیورسٹی کے پہلے اسپتال میں ایک حاملہ خاتون کے شوہر اور بیٹے نے ڈاکٹرکو سیزرین ڈیلیوری کرنے سے انکار کرنے پر پیٹا تھا۔سی جی ٹی این کی رپورٹ میں کہا گیا ہے ،"ساتھی کے مطابق ، اسپتال کی سکیورٹی فوٹیج سے ظاہر ہوتا ہے کہ مریض کے کنبہ کے افراد نے ڈاکٹر کو اس کے سر اور پیٹ میں ایک مکے اور لات سے مارا گیا تھا،جس کی وجہ سے اسے کئی مقامات پر فریکچر ہے۔

بیجنگ نیوز کے مطابق ڈاکٹر کا جبڑا ٹوٹ گیا تھا اور آنکھوں میں گہری چوٹ لگی تھی،اسے علاج کے لئے اسپتال میں داخل کرایا گیا تھا۔چین کی پرانی ویڈیو کو اسپتال میں زی نیوز کے ملازم نے ڈاکٹر کے ساتھ مار پیٹ کرنے کے بارے میں بتاتے ہوئے شیئر کیاگیا ہے۔ یہ بات قابل غور ہے کہ نیہا  کو بہت سارے صارفین نے جواب میں بتایا تھا کہ یہ ویڈیو ہندوستان کی نہیں ہے۔ اس کے جواب میں ، اس نے ایک صارف سے ثبوت مانگے ، انہوں نے لکھا ، "ہم شاید چند ملین خیالات کے بعد ثبوت دیں گے،اگر غلط نکلے تو کھید(دکھ) جتائیں گی، جیسے نیوز چینلز کرتے ہیں۔

نیہا نے اپنے اصل ٹویٹ میں بھی ایسا ہی کچھ لکھا ہے ، "زی نیوز کے عملے نے وائرل ویڈیو میں تفتیش کی تردید کرتے ہوئے ڈاکٹر کو زدوکوب کیا۔" کیا ہم سچائی کو جانے بغیر ہزاروں بار اس طرح شئیر کرسکتے ہیں جیسے نیوز چینلز کرتے ہیں۔ " ہوسکتا ہے کہ ٹویٹر صارف نے زی نیوز سمیت مرکزی دھارے میں شامل میڈیا کا مذاق اڑانے کے لئے یہ کام کیا ہو جہاں اکثر ایسا ہوتا ہے کہ معلومات بغیر تصدیق کے شیئر کی جاتی ہے اور بعد میں بغیر وضاحت کے ہٹا دی جاتی ہے،جب دہلی کے نظام الدین مرکز کو کورونا ہاٹ اسپاٹ قرار دیا گیا تو زی نیوز نے تبلیغی جماعت کا موازنہ القاعدہ اور خودکش حملہ آوروں سے کیا ، اور اس 'معلومات' کے ذرائع کو وکی لیکس سے بتایا۔ آلٹ نیوز نے حال ہی میں زی نیوز کے ایک مضمون کا پردہ فاش کیا تھا،جس میں یہ دعوی کیا گیا ہے کہ برطانیہ کے ریستورانوں میں غیر مسلم صارفین کو انسانی مل(گندھ) کھلایا جاتا ہے۔ تاہم جعلی خبروں کو خود پھیلانا مرکزی دھارے کی میڈیا اور سوشل میڈیا میں جعلی خبروں کا سامنا کرنے کا صحیح طریقہ نہیں ہے۔

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

Post Top Ad