تازہ ترین

Post Top Ad

بدھ، 17 جون، 2020

دہلی پولیس نے ٹویٹ کیس معاملے میں ظفر الاسلام سے طویل تفتیش کی۔

نئی دہلی(یواین اے نیوز17جون2020)دہلی اقلیتی کمیشن کے چیئرمین ظفر الاسلام سے دہلی پولیس کے خصوصی سیل نے تقریباً ڈھائی گھنٹے تک تفتیش کی۔آپ کو بتادیں کہ 15 جون کو اسپیشل سیل نے ظفر الاسلام کو تحقیقات میں شامل ہونے کے لئے نوٹس بھجوایا تھا۔ اور یہ انکوائری اسپیشل سیل نے ان کے جنک پوری میں واقع دفتر میں کی ہے۔

اسپیشل سیل نے ظفر الاسلام پرسوشل میڈیا پر بیان پوسٹ کرنے کے لئے بغاوت اور مختلف دیگر دفعات کے تحت مقدمہ درج کیا تھا۔ آپ کو بتادیں کہ ظفر الاسلام نے 28 اپریل کو سوشل میڈیا پر کچھ پوسٹس شائع کی تھیں جس میں انہوں نے لکھا تھا کہ ہندوستان میں مسلمانوں کو دبایا جارہا ہے اور اگر ہندوستان کے مسلمان عرب ممالک سے شکایت کرتے ہیں تو زلزلہ آجائے گا۔

دہلی پولیس کے خصوصی سیل نے مختلف برادریوں میں مذہب ، پیدائش ، جگہ ، رہائش اور زبان پر مبنی بغاوت اور نفرت انگیز جرائم کے لئے 2 مئی کو ظفر الاسلام کے خلاف تعزیرات ہند کی دفعہ124اے اور 153 اے کے تحت ایک شکایت کی بنیاد پر اس سلسلے میں مقدمہ درج کیا گیا تھا۔

اسی کے ساتھ ہی ہائیکورٹ میں ظفر الاسلام کی گرفتاری پر 22 جون تک روک لگا دی گئی ہے۔ اسی دوران عدالت کی اجازت کے بعد دہلی پولیس ظفر الاسلام سے پوچھ گچھ کررہی ہے اور اس سے قبل ظفر الاسلام نے تحقیقات میں معاونت کرتے ہوئے اپنا لیپ ٹاپ پولیس کے حوالے کردیا۔

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

Post Top Ad