تازہ ترین

Post Top Ad

پیر، 29 جون، 2020

امریکی صدر کے خلاف وارنٹ ایران نے سلیمانی کی ہلاکت کے معاملے میں ٹرمپ کی گرفتاری کا وارنٹ جاری کردیا، انٹرپول سے مدد طلب۔

  تہران۔(یو این اے نیوز 29 جون 2020)  ایران نے امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ کے خلاف گرفتاری کا وارنٹ جاری کردیا ہے۔  ایران نے ٹرمپ کو گرفتار کرنے کے لئے انٹرپول سے بھی مدد طلب کی ہے۔  ایران کے اس اقدام کی وجہ جنوری ماہ میں بغداد میں ہونے والے ڈرون حملے کی ہے، جس میں ایران کی قدس فوج کے سربراہ، جنرل قاسم سلیمانی ہلاک ہوگئے تھے۔

 تہران کے پراسیکیوٹر علی القاسی مہر نے پیر کے روز کہا ہے کہ 3 جنوری کو ہونے والے ڈرون حملے میں صدر ٹرمپ کے علاوہ ایران کے 30 مزید افراد شامل تھے۔  ان تمام لوگوں پر قتل اور دہشت پھیلانے کا الزام ہے۔  ایران ٹرمپ کی گرفتاری کے لئے اپنی کوششیں جاری رکھے گا۔  پھر چاہے ٹرمپ صدر رہیں یا نہیں۔

 انٹرپول نے کوئی جواب نہیں دیا

 لیان  اور فرانس میں موجود انٹرپول نے ابھی تک اس معاملے پر کوئی رد عمل ظاہر نہیں کیا ہے۔  القاسمی مہر نے یہ بھی اطلاع دی ہے کہ ایران نے  انٹرپول سے ٹرمپ سمیت باقی ملزمان کے خلاف ریڈ نوٹس جاری کرنے کی اپیل کی تھی۔  یہ انٹرپول کے ذریعہ جاری کیا گیا سب سے بڑا نوٹس ہے۔  اس کے تحت ملزم کے مقام کا پتہ لگانا اور اسے گرفتار کرنا ہے۔

 ٹرمپ نے سلیمانی پر دہشت گردی کی سازش  کا الزام لگایا تھا
  ایران میں ڈرون حملہ امریکہ نے کروایا تھا،اسکے بعد  صدر ٹرمپ نے  کہا تھا، "قاسم سلیمانی کی دہشت گردی کی سازشیں دہلی سے لندن تک پھیلی تھیں۔  اگر امریکیوں کو کہیں بھی ڈرایا جاتا ہے تو ہم نے پہلے ہی سے  ٹارگٹ کی فہرست تیار کرلی ہے۔  ہم ضرورت کے حساب سے ہر طرح کی کارروائی کے لئے تیار ہیں۔خامنہ ای  نے انتقام لینے کی  بات کہی تھی

 ایران کے اعلی رہنما آیت اللہ علی خامنہ نے کہا کہ ہم جنرل سلیمانی کی موت کا بدلہ لیں گے۔  خامنہ ای نے کہا تھا کہ سلیمانی کی موت نے امریکہ اور اسرائیل کے خلاف دگنی مخالفت کردی ہے۔  جنرل سلیمانی کی موت نے امریکہ سے بدلہ لینے کے لئے ہمیں مزید تقویت بخشی ہے۔  ڈپٹی بریگیڈیئر جنرل اسماعیل غنی کو سلیمانی کی جگہ نیا کمانڈر مقرر کیا گیا۔
 سلیمانی 1998 میں ایرانی پاسداران انقلاب کی قدس فوج کے سربراہ بن گئے تھے

 1998 میں، جنرل قاسم سلیمانی ایرانی پاسداران انقلاب کے خصوصی ایجنٹ کے دستہ 'قدس فوج ' کے سربراہ بن گئے تھے۔  امریکی انٹلیجنس ڈیپارٹمنٹ کی لیک دستاویزات کے مطابق، قاسم پر الزام لگا کہ وہ  سیریا اور عراق میں مقامی جنگجوؤں کو امریکی فوجیوں کے خلاف جنگی تکنیک کی تعلیم دینے کا الزام عائد کیا گیا تھا۔

 وکی لیکس کے مطابق، 2009 میں، امریکی حکام نے بغداد میں ان کے ٹھکانوں پر حملہ روکنے کے لئے جنرل قاسم سے رابطہ کرنے کو کہا تھا۔  تب قاسم نے ان حملوں میں ملوث ہونے سے انکار کردیا تھا

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

Post Top Ad