تازہ ترین

Post Top Ad

بدھ، 7 اپریل، 2021

نکاح کاروبار نہیں بلکہ عبادت ہے، ناچ گانا و جہیز کے لین دین والی شادیوں کا بائیکاٹ کریں! مرکز تحفظ اسلام ہند کی اصلاح معاشرہ کانفرنس سے مولانا سید ازہر مدنی اور مولانا محمد زین العابدین مظاہری کا خطاب!

 بنگلور، 7/اپریل (پریس ریلیز): آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ کے اصلاح معاشرہ کمیٹی کی دس روزہ آسان و مسنون نکاح مہم کی ملک گیر تحریک کے پیش نظر مرکز تحفظ اسلام ہند کے زیر اہتمام منعقد آن لائن اصلاح معاشرہ کانفرنس کی ساتویں نشست سے خطاب کرتے ہوئے جمعیۃ علماء اترپردیش کے سکریٹری نبیرہئ شیخ الاسلام حضرت مولانا سید ازہر مدنی صاحب نے فرمایا کہ اسلام میں نکاح ایک اہم اور بڑی عبادت ہے۔ شریعت اسلامیہ نے نکاح کو بہت آسان بنایا ہے۔ لیکن افسوس کا مقام ہیکہ آج ہمارے معاشرے نے نکاح کو مشکل اور ایک کاروبار بنا دیا ہے۔ مولانا نے فرمایا کہ نکاح ایک کاروبار نہیں بلکہ ایک اہم عبادت اور پیار و محبت کا ایک مضبوط رشتہ ہے۔ شریعت نے ہمیں رشتوں کا انتخاب مال و دولت کے بجائے دینداری کی بنیاد پر کرنے کی تلقین کی اور اسی میں کامیابی رکھی۔ مولانا مدنی نے فرمایا کہ آج کل نکاح میں دن بہ دن غیر شرعی رسوم و رواج بڑھتے ہی جارہے ہیں اور بالخصوص جہیز کا لین دین تو آسمان چھو رہا ہے۔ مولانا نے فرمایا کہ جہیز ایک ناسور ہے جو ہمارے معاشرے کو تباہی کی طرف لے جارہا ہے، اس لعنت نے لاکھوں بیٹیوں اور بہنوں کی زندگی کو جہنم بنا رکھا ہے۔ اس رسم کی وجہ سے ہزاروں بیٹیاں بن بیاہی گھروں میں بیٹھی ہیں اور ہزاروں جانیں اس جہیز کی بھینٹ چڑھ چکی ہیں۔ مولانا نے فرمایا کہ اسی کے ساتھ نکاح میں بارات کی رسم اور فضول خرچی بھی اپنے عروج پر ہے، جس کی وجہ سے لڑکی والے اپنی زندگی کو داؤ پر لگانے پر مجبور ہیں۔مولانا مدنی نے فرمایا کہ نکاح جتنی سادگی کے ساتھ ہوگا اس میں اتنی ہی برکت ہوگی۔ہم جس شریعت کو مانتے ہیں اس کے مطابق نکاح کیا جانا چاہیے، اسی میں کامیابی حاصل ہوگی۔



اصلاح معاشرہ کانفرنس کی آٹھویں نشست سے خطاب کرتے ہوئے دارالعلوم شاہ ولی اللہ، بنگلور کے مہتمم حضرت مولانا محمد زین العابدین صاحب رشادی مظاہری نے فرمایا کہ کائنات میں بسنے والے ہر ہر فرد کی کامل رہبری کے لیے اللہ تعالیٰ نے حضرت محمد رسول اللہؐ کو مبعوث فرمایا۔ اور نبی کریمؐ نے زندگی کے ہر شعبے میں پوری کائنات کی رہبری فرمائی۔ لیکن افسوس کا مقام ہیکہ آج اسی نبیؐ کا ماننے والا مسلمان نبی کے طور طریقوں کو چھوڑ کر اغیار اور مغربی تہذیب کو اپناتا جارہا ہے۔ بالخصوص آج کل کے شادی بیاہ کی تقاریب تو صد فی صد غیر اسلامی بن چکی ہیں۔ مولانا نے فرمایا کا جو لوگ دین و شریعت کو چھوڑ کر شادی بیاہ اور دیگر شعبوں میں غیروں کا طریقہ اپنا رہے ہیں وہ یاد رکھیں کہ انکا حشر انہیں کے ساتھ ہوگا۔مولانا نے فرمایا کہ شادی میں ہونے والے غیر شرعی رسوم و رواج، جہیز کی لین دین، بے پردگی اور ناچ گانا، اور فضول خرچی و دیگر رسومات کا اسلام سے قطعاً کوئی تعلق نہیں اور نہ ہی اسلام اسکی اجازت دیتا ہے۔کیونکہ اسلام نے نکاح کو آسان بنایا ہے اور سادگی کے ساتھ اسے انجام دینے کی تلقین کی ہے۔ اور برکت والا نکاح بھی وہی ہے جس میں کم خرچ اور کم بوجھ ہو۔


مولانا محمد زید العابدین مظاہری اورمولانا سید ازہر مدنی نے فرمایا کہ آج ضرورت ہیکہ ہم عہد کریں کہ ہم نکاح کو آسان اور مسنون طریقہ سے انجام دینگے اور ایسی شادیاں جن میں غیر شرعی رسوم و رواج پائے جاتے ہیں انکا مکمل بائیکاٹ کریں گے۔انہوں نے آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ کی آسان و مسنون نکاح مہم میں امت مسلمہ بالخصوص نوجوانان ملت کو بڑھ چڑھ کر حصہ لینے اور نکاح کو سادہ اور مسنون طریقہ سے انجام دینے کی اپیل کی۔ علاوہ ازیں انہوں نے مرکز تحفظ اسلام ہند کی خدمات کو سراہتے ہوئے خوب دعاؤں سے نوازا۔

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

Post Top Ad