تازہ ترین

Post Top Ad

جمعرات، 3 جون، 2021

ہیں کتنے روز یہ بوڑھے شجر نہیں معلوم

 ام ہشام،ممبئی 

 (١)پروگرام کے دوران بار بار میری نظریں اس بزرگ خاتون کے چہرے پر کچھ اس طرح جاکر ٹھہر جاتی کہ میرے اپنے الفاظ لڑکھڑانے لگتے۔ محسوس ہوا کہ ،وہ مجھ سے کچھ کہنا چاہتی ہیں۔ جوں ہی پروگرام ختم ہوا، ضعیفہ بھیڑ کو ہٹاتی  ہوئی سیدھی مجھ تک آگئیں ۔میں نے سلام کو ہاتھ بڑھائے ،تو نظر انداز کرتے ہوئے میرے ہاتھ اور چہرے کو چُومنے لگیں ۔اور پھر گلے سے لگ کردفعتا  رونا شروع ہوگئیں ۔رونا کیاتھا ، مانو کوئی بچّہ ماں کے گلے سے لگ کر رورہا ہو۔پھر میں نے بھی دانستا انہیں خاموش کرانے سے گریز کیا کہ پہلے بڑی بی رو کر اپنا غم ہلکا کرلیں پھر ان سے آگے کوئی بات ہو۔



(٢)وہ جینٹلمن اب پچاسی (٨٥)کے لپیٹے میں ہیں ۔ ایک ریٹائرڈ لیکن  باشعور معمر انسان جس کی بیمار بوڑھی بیوی پچھلے چار سالوں سے بستر کی ہوکر رہ گئ تھی ۔ان کا معمول بن گیا تھا کہ وہ رات کے ساڑھے دس بجے بس پر سوار ہوکر گھر سے دو اسٹاپ آگے جاتے تاکہ وہ بیوی اور خود کے لئے دو وقت کفایت کرجانے والی ، چھ (٦) عدد تازہ گھر کی بنی گیہوں کی روٹیاں لاسکیں ۔آج کل جینٹلمن ایک بھرے پُرے گھر میں تنہائی کے عذاب سے دوچار ہیں ۔شریک سفر زندہ تھیں تو ، بڑی محنت سے کھانا وغیرہ بنالیتے لیکن اب تنہائی نے ہمت بھی توڑدی ۔اب تو عربوں کی طرح دودھ کھجور یا دودھ روٹی پر گزر بسر ہوتی ہے۔ باقاعدہ کوئی ڈش نہیں بناتے ۔


آپ کو کیا لگتا ہے؟ بڑی بی مجھ اجنبی کے گلے لگ کر اس قدر تڑپ کر کیوں روئیں ؟انہوں نے مجھ سے کہا  "۔تم میرے گھر چلو اور جو باتیں والدین کے حقوق پر تم نے پروگرام میں بتائیں وہی باتیں میرے گھر والوں کو سمجھادو ۔ مجھ سے راستہ چلا نہیں جاتا لیکن پوتے پوتیوں کو اسکول پہنچانے اور لانے کا کام میرے ذمّہ ہے۔ ذرا سی دیر ہوجائے تو  مجھے بہت جلدی جلدی چلنا پڑتا ہے جس کی وجہ سے  میں گر جاتی ہوں اور اکثر مجھے چوٹیں آتی ہیں ۔لیکن میرے بیٹے اور بہو یہ بات نہیں سمجھ رہے، وہ کہتے ہیں چلنا آپ کی صحت کے لئے فائدہ مند ہے ۔ صبح صبح بستر سے اٹھا نہیں جاتا لیکن بیٹے کی ناراضی کے خوف سے اٹھ کر بچوں کے اسکول جانا پڑتا ہے ۔اس کے علاوہ سودا سلف لانا بھی میری ہی ذمہ داری ہے۔وہ بار بار ایک ہی جملہ کہتیں " بیٹا !!! میری بوڑھی ہڈیوں میں اب طاقت نہیں رہی  " تم میرے گھر چل کر کچھ اچھی باتیں انہیں بھی سمجھادو تاکہ وہ مجھ سے زیادہ کام نہ لیں۔  ایک بوڑھے اور تھکے ہوئے جسم کو جسے خود راستہ چلنے کے لئے ہمہ وقت کسی سہارے کی ضرورت ہوتی ہے اسے بچوں کا محافظ بناکر گھر سے باہر کے کاموں پر لگادیا جاتا ہے یہ کس قدر شرمناک اور افسوسناک بات ہے۔


اور آپ کا ان جینٹلمن کے بارے میں کیا خیال یے.؟ رات کے وقت بس میں سوار ہوکر روٹی خریدکر لانا کچھ عجیب سا لگتا ہے نا! مجھے بھی یہ بات آپ سے زیادہ عجیب لگی تھی، کیونکہ میں نے اس باہمت ، نیک دل اور" فرشتہ صفت "انسان کو بہت قریب سے دیکھا ہے ۔بچپن سے لے کر اب تک دیکھتی آرہی ہوں ۔ کیا وجوہات رہی ہوں گی کہ بیٹے کی فیملی ہونے کے باوجود مستقل بیمار رہنے والا یہ بزرگ جوڑا دو وقت کی دال روٹی کا محتاج تھا؟

پہلی بزرگ خاتون اور دوسرے جینٹلمن بزرگ دراصل الگ الگ حالات و واقعات میں اپنی سگی اولاد کے ہاتھوں ایک ہی طرح سے ڈسے گئے تھے جس کا تریاق ان کی اپنی اولاد کے پاس ہی تھا ۔میری طرح آپ نے بھی ایسے یا اِس سے زیادہ  افسوسناک واقعے دیکھ یا سُن رکھے ہوں گے۔ آپ نے افسوس کیا ہوگا دُکھ جَتایا ہوگا ،تسلیاں بھی دی ہوں گی ۔لیکن کیا ان سب سے بزرگان کی تسلی کا سامان ہوجائے گا ؟شاید نہیں ،


 نام نہاد معاشی و ثقافتی ترقی کے نتیجہ میں پیدا ہونے والی مصروفیات کا سب سے بڑا خمیازہ آج اگر کسی کو بھگتنا پڑا تو وہ ہیں ہمارے گھروں کے بڑے بزرگ  بالخصوص بزرگ والدین کو ، پیسے بنانے کے چکر میں ایک فاصلہ پر رکھ دینا ایک طرح سے ان کو آدھی موت دینے کے مترادف ہے۔اور رہی سہی کسر آپ کے ناروا سلوک اور زیادتیوں نے مکمل کر رکھی ہے۔ جس کی وجہ سے بُزرگان اپنی موت سے پہلے ہی مرجاتے ہیں۔یہ بھی تبھی ہوتا ہے جب "عصائے پیری "کہلائی جانے والی اولاد ،سزا کا ڈنڈا بن کر والدین پر برسنے لگتی ہے۔


والدین اس قدر خائف ہونے لگیں کہ جائز باتیں بولنا چھوڑدیں اپنے حق اور ضرورت کی چیزیں بھی طلب کرنے میں خوف محسوس کرنے لگیں ۔چھوٹی چھوٹی چیزوں کو ترستے ہوئے بزرگوں کو ترساکر معاشرہ کس قسم کی ترقی کررہا ہے ؟ہم بے شک پیرنٹننگ کی بڑی بڑی  باتیں کرتے ہیں لیکن اچھی تعلیم وتربیت کا جو اصل منبع ہمارے گھروں میں بزرگوں کی صورت میں موجود ہے بچوں کو جان بوجھ کر ان کے سایہ عاطفت سے محروم رکھا جارہاہے۔ اور بزرگ اپنے پوتے پوتیوں پر اپنی محبت وشفقت نچھاور کرنے کی آس لئے اندر ہی اندر گھل گھل کر ختم ہو جاتے ہیں۔مذکورہ واقعات سے کشیدہ مسائل  سے تقریبا ًملتے جلتے مسائل ہرگھر میں موجود ہیں لیکن اس طرف کوئی توجہ نہیں دے رہا۔پھر وہ بزرگ مرد یا عورتیں جن کا شریک سفر انہیں زندگی کی راہوں میں تنہا چھوڑگئے اب اگر وہ اپنی بنیادی اور ناگزیر ضروریات کے لئے دوبارہ شادی کرنا چاہتے ہیں تو پھر سے یہ سماج اور اس کی  واہیات، غیر شرعی، بوسیدہ ذہنیت ان بزرگوں کو ننگ وعار دلاتے ہیں۔ انہیں ان کی پیری ضعیفی کا واسطہ دے دے کر دوسری شادی سے منع کرتے ہیں ۔


سوال یہ ہے کہ آپ میں سے کون ہے جو آدھی رات کھانستے ہوئے باپ کے سرہانے ان کی تیمارداری کے لئے ہمہ وقت حاضر ہوسکتا ہے ؟اور وہ کون سی بیٹی ہے جو اپنے میاں اور بچوں کو چھوڑ کر باپ کے گھر ہفتہ در ہفتہ قیام کرے گی اور بوڑھے باپ یا ماں کی ضروریات کا خیال رکھے گی ؟شاید بوقت ضرورت کوئی بھی ایسی خدمات وقربانیوں کے لئے میسر نہیں ہوگا اور اگر ہو بھی تو زوجین کی طرح ایک دوسرے کی ضروریات کو کماحقہ ادا نہیں کرپائے گا۔ تو پھر انسانیت کے اس ستم رسیدہ طبقہ کو حالات کے رحم و کرم پر کیوں چھوڑدیا گیا ؟ 


آپ اگر غور کریں تو سمجھ پائیں گے کہ بڑھاپے کی نفسیات کا سب اہم پہلو ہے کہ انسان کی شدید خواہش ہوتی ہے کہ اس کے چھوٹے، اسے عزت وتکریم دیں ۔اس کی رائے کا احترام کریں، اور انہیں گھر اور معاشرے میں نمایاں مقام ملے، لوگ انہیں مشاورت میں شامل کریں۔شاید یہ بڑھاپے کا وہی دور ہوتا ہے جب انسان دوبارہ بچپن کی طرف لوٹ جاتا ہے اور نبی رحمت ﷺ  نے اپنی دعاؤں میں اسی ارذل عمر سے پناہ بھی طلب کی تھی۔ کبھی اس بوڑھے کا دل گول گول جلیبیوں پر مچل جاتا ہے تو کبھی ٹھنڈی ٹھنڈی آئسکریم اسے اپنی طرف کھینچتی ہے۔ کبھی گول گپّے کا چٹخارہ  انہیں بے چین کردیتا ہے۔ بچپن کے بعد یہ بڑھاپے کا ہی دور ہوتا ہے جب زبان الگ الگ ذائقوں  کی تمنا کرتی ہے۔ آنکھوں سے نظر آتی رنگ برنگی اشیاء کو جلدی سے چکھ لینے کی بڑی  بےتابی ہوتی ہے۔ لیکن بڑھاپے کی خواہشات بھی کبھی پوری کی جاتی ہیں یہ تو بس لعنت ملامت کی خاطر ہوتی ہیں۔ 

بوڑھوں کو بے قرار کرنے کے لئے ۔سب سے زیادہ تنقید انہیں کھانے پینے میں برداشت کرنی پڑتی ہے۔ان کے لئے مقوی غذاؤں کا اہتمام نہیں کیا جاتا ، نہ ہی ان کے اندر کے بچے کو سمجھنے کی کوشش کی جاتی ہے۔کبھی وہ بچوں کے ساتھ کھیلنا چاہتےہیں ، ان کی اخلاقی و روحانی تربیت کرنا چاہتے ہیں ،انہیں خیر وشر کی تمیز دلانا چاہتے ہیں ۔ لیکن ہم ان کے نظریات وطریقوں سے مطمئن نہیں ہوتے اس لئے انہیں بچوں کی تعلیم و تربیت سے پرے رکھ کر اولاد کو معلّمِ زماں گیجٹ اور اسکرین کے حوالے کردیتے ہیں۔بزرگ کوئی تخلیقی کام کرنا چاہتے ہیں، اپنے پرانے شوق کو زندہ کرنا چاہتے ہیں اور ہم اسے فضولیات کا نام دے کر انہیں اپنے بچوں اور گھر کے فالتو اور محنت طلب کاموں پر لگادیتے ہیں۔وہ گھر سے باہرنکل کر اپنے جیسے لوگوں سے ملنا چاہتے ہیں ان کی مجلسوں میں شریک ہونا چاہتے ہیں لیکن انہیں گھر کا چوکیدار بناکر خود سیر سپاٹوں کے مزے لئے جاتے ہیں۔


مقام افسوس ہے کہ ہم سن رسیدہ لوگوں کی خواہشات کو اپنی مصروفیات ، مفادات ، اور خود غرضی تلے روند دیتے ہیں ۔جس کی وجہ سے وہ پہلے پہل ہم سے بحث وتکرار کرتے ہیں، پھر لڑنے پر آمادہ ہوتے ہیں۔ اور تھک ہار کر بالآخر ہر طرح کی دفاعی کوشش ترک کرکے، زندگی اور خوشیوں سے منہ موڑ کر چُپ سادھ کر اپنے خول میں سمٹ جاتے ہیں۔ جس عمر میں بزرگ والدین کو سکون سے دو وقت کی روٹی کھلانی چاہیے،ان کے لاڈ اور چاؤ کرنے چاہئے۔ اس عمر میں یہ بوڑھی ہڈ ّیاں اپنے حالات سے مجبور ہو کر  اونچی اونچی عمارتوں میں رہنے والے ہٹّے کٹّے لوگوں کی حفاظت کرتی ہیں ۔ ان کے رعشہ زدہ ہاتھ چوکیدار یا چپراسی کے فرائض نبھاتے ہیں۔ خون جگر پلا پلاکر ایک نومولود کو توانا جوان کرنے والی ماں کو اس کی پِیری میں تحفظ و وقار کے بدلے در بدر کی ٹھوکریں ملتی ہیں۔وہ اپنی بنیادی اور چھوٹی چھوٹی ضرورتوں کے لئے دوسروں کی محتاج بنادی جاتی ہے۔ وہ گھروں میں جھاڑو کٹکے کے کام کاج کرتی ہے ، کسی اسکول ،آفس یا کارخانے کی گرد صاف کرتی ہے۔ یا پھر سردو گرم موسم سے بے نیاز سڑک کنارے کھلونے  ،سبزیاں بیچتی پھرتی ہے۔ہر جگہ ، ہر گھر میں اس قسم کی افراط تفریط موجود ہے طبقہ طبقہ کا فرق ہے بس ۔ 


خوشحال طبقہ کے بزرگ گرچہ کہیں کام نہیں کرتے ،لیکن ان کی زندگی بھی اختیارات اور خوشیوں سے خالی ہوتی ہے بلکہ وہ کسی غریب یا متوسط طبقہ کے مقابلہ اور زیادہ تنہا ہوتے ہیں۔ہمیں اپنا آپ ٹٹولنے کی ضرورت ہے ممکن ہے کہیں کسی جگہ ہم ان کے قصوروار بن رہے ہوں۔یہ بوڑھے شجر ان کے وجود سے ہماری زندگیوں میں خیر وبرکت ہے یہ ہمارے لئے جنت کی ضمانت اور رب کی رضا کا پروانہ ہیں ۔ان کے دم سے ہماری اولاد میں خود اعتمادی اور خوش اخلاقی کا دریا موجزن ہے۔زندی کی پر پیچ راہیں ان کی رہنمائی کی طلبگار و محتاج ہیں۔بزرگوں کو زک پہنچانا شر ک کے بعد سب سے بڑا گناہ ہے۔نماز جیسی توقیفی عبادت میں بھی نبی رحمت ﷺ  نے معمر افراد کے لئے تخفیف کا حکم دیا ، ان کے اکرام کا خیال رکھنا ایک اچھے مسلمان کی پہچان ہے ۔اور اگر آپ مسلمان نہیں بننا چاہتے تو کم از کم انسان ہی بن جائیں اور اپنے بزرگوں کو تکلیف نہ پہنچائیں۔إِنَّ مِنْ إِجْلَالِ اللَّهِ : إِكْرَامَ ذِي الشَّيْبَةِ الْمُسْلِمِ ،اللہ کی تعظیم میں سے ایک یہ بھی ہے کہ بزرگ (سن رسیدہ) مسلمان کی عزت کی جائے۔ (ابوداود 4843)

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

Post Top Ad