تازہ ترین

Post Top Ad

Friday, May 22, 2020

کورونا وائرس کے دور میں اڈانی امبانی کو ملا ہزاروں کروڑ کے کوئلہ ،بجلی کا ٹینڈر۔

نئی دہلی(یواین اے نیوز23مئی2020)ہندوستان کو خود انحصار کرنے کے لئے حکومت نے اڈانی اور امبانی جیسے بڑے صنعت کاروں کو بھی خود انحصار کر رہی ہے یا بلکہ انہیں زبردست فائدہ دے رہی ہے۔ وزیر خزانہ نرملا سیتارامن نے یہ معلومات امدادی پیکیج سے متعلق چوتھی پریس کانفرنس میں دی ہے۔انہوں نے بتایا کہ بجلی کمپنیوں سے کول انڈیا کی کھدان کی جانے والی سرنگیں پرائیویٹ ہاتھوں کو دی جائیں گی۔ حکومت معیشت کو گرنے سے بچانے کے نام پر بہت سے کاروباری گھرانوں کو فائدہ پہنچانے والی ہے۔

ایک طرف مزدوروں کا پلائن رکنے کا نام نہیں لے رہا ہے دوسری طرف حکومت امبانی اڈانی ، ٹاٹا پاور ، جے ایس ڈبلیو اسٹیل اور ویدانتا جیسے تاجروں کو زبردست فائدہ دے رہی ہے۔ اگرچہ اس سے مودی حکومت میں پرائیویٹ ہاتھوں میں دینا کوئی نئی بات نہیں ہے ، لیکن کرونا کے بہانے اسےپھرسے دہرایا جارہا ہے۔وزیر خزانہ نے پریس کانفرنس میں کہا کہ مزید 6 ہوائی اڈوں کو نیلام کیا جائے گا۔ اس سے پہلے بھی 6 ہوائی اڈوں کی نیلامی ہوچکی ہے اس کا مطلب ہے کہ کل 12 ہوسکیں گے۔ قابل غور بات یہ ہے کہ انہوں نے یہ بھی کہا ہے کہ ان میں سے کچھ منصوبے طویل عرصے کے لئے ہیں اور اس سے کورونا بحران میں مدد ملنے کا امکان پنہیں ہے۔ پھر راحت پیکیج میں ہی اس نیلامی کا اعلان کرنے کی کیا ضرورت تھی؟

کان کنی بڑھانے کے لئے حکومت کول انڈیا لمیٹیڈ کو بہتر نہیں بنا رہی ہے بلکہ اس کی نجیکاری کر رہی ہے۔آپ کو بتادیں کہ اس طرح کے 50 نئے بلاکس نیلامی کے لئے دستیاب ہوں گے۔ کوئلے کی کانوں کی نیلامی کو روکنے کے ذریعے ، حکومت 500 کان کنی کے بلاکس کی نیلامی کرے گی ،جس سے ویدتا ایلومینیم جیسی کمپنیوں کو فائدہ ہوگا۔ ملک کو خود کفیل بنانے کے لئے حکومت ہر طرح سے نجیکاری کا سہارا لے رہی ہے۔کوئلے کی کانوں اور ہوائی اڈوں کی نیلامی کے علاوہ مرکزی حکومت علاقوں کی بجلی کمپنیوں کو بھی پرائیویٹ کرے گی۔ اس نجیکاری کی وجہ سے ، اڈانی اور ٹاٹا پاور کو بڑے فوائد مل سکتے ہیں۔حکومت نے دفاعی پیداوار میں ایف ڈی آئی کی حد 49 فیصد سے بڑھا کر 74 فیصد کردی ہے۔

حکومت معیشت کو سنبھالنے کے لئے سرکاری کمپنیوں کی نجیکاری کرکے کاروباریوں سے فائدہ اٹھا رہی ہے۔اور دوسری طرف مزدوری قوانین کو ایک طرح سے ختم کرکے مزدور استحصال کا استحصال کررہی ہے۔اس میں اوڈیشہ اور راجستھان جیسی ریاستی حکومتیں بھی شامل ہیں۔سوال یہ ہے کہ کیا غریبوں کا بیٹا کہہ کر یا اس کے نام پر ووٹ مانگ کر مسئلہ حل ہوگا؟ اگر حکومت کے فیصلے صنعت کاروں کے حق میں آتے رہتے ہیں اور مزدوروں کے حقوق چھینتے ہیں تو ان کا پلائن(جانے)کو نہیں روکا جائے گا۔پھر ان بڑی کمپنیوں میں کون کام کرے گا؟

No comments:

Post a Comment

Post Top Ad