تازہ ترین

Post Top Ad

منگل، 5 مئی، 2020

شراب کے لئے لگی لمبی قطار ، الکا لانبا نے کہا ، اگر رمضان نہ ہوتا تو کجریوال اسے بھی جماعتی....

دہلی(یواین اے نیوز 5مئی2020) لاک ڈاؤن گذشتہ ماہ سے ملک بھر میں نافذ ہے ، اب حکومت نے فیصلہ کیا ہے کہ شراب کی دکانیں کھول دی جائیں۔حکومت کے فیصلے پر بھی بڑی تعداد میں تنقید کا نشانہ بنایا گیا ہے جو اب بھی جاری ہے ۔سوشل میڈیا پلیٹ فارم پر حکومت کا یہ فیصلہ لوگوں نے بھی حمایت کی ہے ، لیکن طنزیہ اور طنز کی شکل میں ، احتجاج اور تنقید بہت سخت الفاظ میں کی جارہی ہے ، بلکہ کچھ لوگ لاک ڈاؤن میں شراب کی دکانوں کو کھولے جانے کے فیصلے کو سازش تک بتا رہے ہیں۔

ٹویٹر پر اسی تنقید اور تعریف کے دوران ،ایک صارف ہربھجن سنگھ نے مشرقی دہلی کے علاقے چندر نگر کی ایک تصویر ٹویٹ کی ہے ، جس میں بتایا گیا ہے کہ شراب کے خریداروں کی ایک کلومیٹر لمبی لائن دکھائی دیتی ہے۔ ٹویٹ میں لکھا ہے کہ اچھا ہوا کہ یہ رمضان کا مہینہ تھا ، ورنہ جماعت کے لوگوں کو خالی پیلے دارو کے ٹھیکوں کا ہجوم دیکھ کر بدنام کیا جاتا۔ اور سابق خواتین ایم ایل اے الکا لامبا نے دہلی کے وزیر اعلی اروند کیجریوال کو نشانہ بناتے ہوئے لکھا کہ۔صحیح کہا ، روزے میں تو پانی نہیں پیا جاتا ہے ، ورنہ یہ الزام بھی سنگھی کیجریوال حکومت انہیں پر بھی ڈال دیتی'۔ 

ٹویٹر صارفین الکا لامبا کے اس ٹیوٹ کو بڑی تعداد میں ریٹویٹ کررہے ہیں ، اور یہ تصاویر سوشل میڈیا پر تیزی سے وائرل ہوگئی ہیں۔بتا دیں کہ دہلی نظام الدین مرکز کے حالیہ کیس کے بعد بار بار کورونا اروند کیجریوال اس انفیکشن کو پھیلانے کے لئے تبلیغی جماعت کو ذمہ دار ٹھہرا چکے ہیں ،جس پر مسلم برادری کے ساتھ ہندوؤں نے بھی كھلے الفاظ میں ناراضگی ظاہر کی تھی اور کہا تھا کہ بی جے پی اپنی ناکامیوں کو چھپانے کے لئے جس طرح نہرو کو ذمہ دار ٹھہرا دیتی ہے ٹھیک اسی طرح اروند کیجریوال بھی کورونا کی روک تھام میں ناکام ہونے کی اپنی ناکامی جماعتیوں پر تھوپ رہے ہیں۔

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

Post Top Ad